نامعلوم سے معلوم تک

زندگی کے رنگوں کی اڑتی ہوئی دھنک
جسے پکڑنے کی خواہش میں
انسان بھاگتا رہتا ہے
مگر کوئی اس دھنک کو اپنے ہاتھوں  پر نہیں اتار سکا
اس کا تعاقب جاری ہے
وہ ایک ایسی ڈور میں شریک ہے
جس کا کوئی کنار نہیں ہے
حالانکہ زندگی  ۔۔۔۔
خود انسان کے وجود میں
موج در موج سفر کررہی ہے
مگر وہ نہیں جانتا
کیونکہ وہ باہر کی آوازوں میں گم ہو گیا ہے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *