Category Archives: Prose Poetry

اس کی آخری تصویر

ٹیلفون کی کنٹکیٹ لسٹ میں
اپنے دوستوں کا نام تلاش کرتے ہوئے
اس کا نام باربار
میری نظروں کے سامنے سے گزرتا ہے
اس کی آخری تصویر
کنٹرکٹ پروفائل پرموجود ہے
جسکے عکس کوکیمرےکی آنکھ نے کبھی قید کیاتھا
میں ڈائل بٹن کو پریس کرتا ہوں
دیر تک ڈائل ٹون بجتی ہے
اور پھر یکلخت خاموش ہوجاتی ہے
مجھے اچھی طرح معلوم ہے
میرا مطلوبہ شخص اب اس دنیامیں نہیں
اس کی لحد پر مٹی ڈالتے ہوئے
میں نے ایک بوجھ اپنے دل پر محسوس کیا
مجھے اس سے بہت کچھ کہنا تھا
لفظوں کی بیسا کھیاں تھامے
ہمیشہ کچھ کہنے سے پہلے ہی
گفتگو کی دھلیز پر لڑکھراا جاتا تھا
مگر کچھ کہہ نہیں پاتا
میں ایک بار پھر کچھ دیر تک
پروفائل پر موجود اس کی تصویر کو دیکھتا ہوں
ایک بار پھر کوشش کرتا ہوں
ان کہی کو لفظوں میں سمونےکی
مگر ہار جاتا ہوں
پروفائل پر موجود اس کی تصویر جیسے کچھ سنا چاھتی ہے
مگر میں اب بھی کچھ کہنے سے قاصرہوں
میرے دل میں چھپا ڈر
دشمن کی طرح سامنے کھڑ ا ہے
خود کو بچانے کے لئے
میرے پاس
کوئی راستہ نہیں
میں کچھ دیر سوچتا ہوں
اور اس کا نام کنٹیکٹ لسٹ سے
ہمیشہ کے لیے ڈیلیٹ کردیتا ہوں

اکمل نویدؔ

نثری نظم

غیر تخلیقی لمحوں کا درد

یہ لمحے جو گزررہے ہیں،مجھے ایک درد سے دوچار کررہے ہیں
میں اپنے دل کی ڈھرکنوں کو لفظوں سے جوڑکر
ایک ایسا آھنگ بنا نا چاھتا ہوں
جو میرے ساتھ دور تک چلے
تنہائیوں کی قید سے باہر
سورج کو دیکھتے ہوئے
اپنے اندر پھیلتے اندھیروں سے  میں ڈر رہا  ہوں
کتنا بڑا عرصہ بیت گیا
مگر میں  وہ لفظ نہیں کہہ سکا
جس کے پیچھے کوئی تخلیق کا ر فرما ہو
اتنی گہری خاموشی کے پیچھے
صرف اجبنی آنکھیں ہیں
جو وہ لفظ سننا چاھتی ہیں
جو ہاتھ کی ہیتھلی پر  بجھے ہو دئے
کو روشن کر سکے
ان غیر تخلیقی لمحوں میں
درد ہی میرا ساتھی ہے

سر سبز درخت کی لاش

 

 

Skip to toolbar